تناؤ – وجوہات، اقسام اور علامات

تناؤ – وجوہات، اقسام اور علامات

تناؤ ایک فطری احساس ہے جس میں آپ کسی خاص انسان اور واقعات کا سامنا کرنے سے ڈرتے ہیں ۔

یہ مطالبات/ کام، تعلقات، مالی حیثیت، اور دیگر حالات کو نا سمجھنے یا سر انجام دینے میں ناکام ہونے سے  پیدا ہو سکتے ہیں جو دراصل کسی شخص کی ذہنی صحت کے لیے خطرہ ہیں۔ تناؤ ایک دائمی  یعنی مستقل حالت میں بدل سکتا ہے اگر آپ اس کا صحیح اور فوری علاج نہیں کرتے ہیں۔

تناؤ کی اقسام

تناؤ کی دو اہم اقسام ہیں:

شدید 

دائمی

تاہم، مندرجہ ذیل قسم کے تناؤ کے بارے میں بھی پرھتے چلیں :

معمول کا تناؤ جیسے بچوں کی دیکھ بھال، ہوم ورک یا مالی ذمہ داریاں؛

غیر متوقع، تباہ کن تبدیلیاں، مثال کے طور پر: خاندانی مسائل بھی اکثر تناؤ کا باعث بنتے ہیں۔

شدید تناؤ 

تکلیف دہ تناؤ جو کسی سنگین حادثے، حملے، ماحولیاتی تباہی یا جنگ کے نتیجے میں پیدا ہو سکتا ہے۔

بلاشبہ، شدید تناؤ اتنا نقصان نہیں پہنچاتا جتنا طویل، دائمی تناؤ۔

قلیل مدتی اثرات میں تناؤ، سر درد، اضطراب شامل ہیں۔ مثال کے طور پر کوئی شخص امتحانات، یا سروس کے مسائل سے گھبرا سکتا ہے، تاہم جیسے ہی یہ مسائل حل ہو جاتے ہیں یہ غائب ہو جاتا ہے۔

آپ کو یہ بات جان کر حیرت ہوگی کہ

تناؤ عورت کی خوبصورتی کوشدید  متاثر کرتا ہے –

اور ہر وقت غنودگی اور بے خوابی کا سبب بنتا ہے –

اس کے علاوہ یہ حقیقت بھی قابل ذکر ہے کہ اگر شدید تناؤ دوبارہ ہوتا ہے تو  اس بار طویل عرصے تک وقت کے ساتھ، یہ پہلے سے ہی دائمی کشیدگی میں تبدیل ہوسکتا ہے.

دائمی تناؤ

اس قسم کا تناؤ ایک طویل عرصے میں ظاہر ہوتا ہے اور زیادہ نقصان دہ ہوتا ہے۔

مسلسل غربت، غیر فعال خاندان یا ناخوش شادی شدہ زندگی  – دباؤ والے حالات کی مثالیں ہیں جو دائمی تناؤ کا باعث بن سکتی ہیں۔ ایسا اس وقت ہوتا ہے جب کسی شخص کو تناؤ سے بچنے کا کوئی راستہ نظر نہیں آتا اور وہ حل تلاش کرنا چھوڑ دیتا ہے۔ کم عمری میں تکلیف دہ تجربات بھی دائمی تناؤ میں حصہ ڈال سکتے ہیں۔

دائمی تناؤ غیر علامتی طور پر آپ کے ساتھ بنا کسی علامات کے رو سکتا ہے  کیونکہ لوگ پہلے ہی ایک ناامید زندگی اور کسی چیز کے بارے میں  سوچ کر مستقل گھبراہٹ کا شکار ہوتے  ہیں۔ اس لیے یہ کسی  اس فرد کی شخصیت اور زندگی کا حصہ بن سکتا ہے اور وہ اس بات سے بےخبر ہوتا ہے- 

دائمی تناؤ خودکشی، تشدد، ہارٹ اٹیک یا فالج کا باعث بن سکتا ہے۔

جس کی وجہ سے

لوگ دباؤ والے حالات پر مختلف ردعمل کا اظہار کرتے ہیں۔ جو چیز ایک شخص کے لیے تناؤ کا باعث ہے وہ دوسرے کے لیے اتنا دباؤ یا تناؤ والا  نہیں ہو سکتا۔

بلاشبہ، اس بات کی کوئی صحیح وضاحت نہیں ہے کہ ایک شخص دوسرے سے نسبتاً زیادہ تناؤ کا تجربہ کیوں کر سکتا ہے۔ زندگی کے اہم واقعات جو تناؤ کا سبب بن سکتے ہیں وہ ہیں:

  • کام پر تنازعہ
  • وقت یا پیسے کی کمی
  • شدید نقصان
  • خاندانی مسائل
  • شدید، دائمی بیماری
  • نئے گھر میں منتقل ہونا
  • تعلقات، شادی، اور طلاق

تناؤ کی دیگر عام وجوہات میں شامل ہیں:

  • حمل
  •  جرم کے احساسات
  • پڑوسیوں کے ساتھ مسائل
  • وزن کے مسائل
  • بہت زیادہ شور
  • اوور لوڈ شیڈول

تناؤ کے جسمانی نتائج یہ ہو سکتے ہیں:

  • پسینہ آنا
  • کمر یا سینے میں درد
  •  پٹھوں میں درد 
  • کھنچاؤ
  • سر درد
  • بے چینی 

تناؤ پر جذباتی رد عمل:

  • غصہ
  • تھکن
  • برداشت  میں کمی
  • تھکاوٹ
  • عدم تحفظ کا احساس
  • بھول جانا
  • دھندلا پن
  • بےچینی
  • اداسی

اگر آپ بھی ان میں سے کوئی علامات محسوس کر رہے ہیں تو جلد سے جلد اپنے معالج سے رابطہ کریں – گھر پر خود سے علاج کرنا کسی بھی صورت درست نہیں ہے –

1 thought on “تناؤ – وجوہات، اقسام اور علامات

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *