Shahr-e-Khamoshaan

postry shahr e khamooshaan

شہرِخموشاں

شہرِخموشاں سے کبھی گزروں تو
بظاہر کچھ پل کو ٹھہر جاتی ہوں
بیتے ہوۓ لمحوں اور
بچھڑے ہوۓ اپنوں کی یاد
پلکوں کو بھگوتی ہے مگر پھر
میں
چلتے چلتے آہستہ سے
دل ہی دل میں
اپنے بچھڑے ہوؤں کے لئے
شہرِخموشاں کے مکینوں کے لئے
زیرِلب کچھ نہ کچھ پڑھتی ہوں
کوئی دعا ،کوئی درود
کوئی اسِم ، کوئی ورد
کہ ان کی یہی چاہت ہے
اسی میں ان کی راحت ہے
ان خاموش لوگوں سے
میں ایسے بات کرتی ہوں
یا شائد اپنے لئے کوئی
میں راہ ہموار کرتی ہوں
کہ کل جب میں یہاں ہوں
انہی کے درمیاں موجود
کوئی بھولے سے گزرے تو
بھلے ایک پل کو ٹھہرے تو
چشم نم نہ ہو لیکن
لبوں پر ورد ہو کوئی!!!!!

کچھ اپنوں کی یاد ہمیشہ ساتھ رہتی ہے. بھلے آپ اسکا برملا اظہار کریں یا نہ کریں.
یہ اس شہر کی بات ہو رہی ہے جہاں ہم میں سے ہر کسی کا کوئی نہ کوئی ضرور جا بسا ہے .
یاد تو کرتے ہی ہیں دعا بھی کر دیا کریں.

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *