khushi Bharpur hamein kab raas aii

خوشی بھرپور ہمیں کب راس آئی

خوشی بھرپور ہمیں کب راس آئی
ساتھ کسی غم کی سوغات لائی
جب چاہوں کہ کھل کے ہنسوں اب
جانے کیوں آنکھ میں برسات اتر آئی
اب کہ سوچا یہ معمہ بھی حل ہو
لاکھ چھپاؤں خود سے بھی تجھ کو
دیکھ کر یہ تقدیر دور کھڑی مسکائی
یوں تو مسلہ کچھ نہیں غم سے مجھ کو
حیران ہوںکہ ہر بار یہ فال میرےنام آئی

Leave a Reply

Your email address will not be published.