Kh Hum Nazroon Sy Sunty Hein

کہ ہم نظروں سے سنتے ہیں

 

 

ہونٹوں کو جو پڑھتے ہیں

 

تو ہاتھوں کو سمجھتے ہیں

نہیں ہیں نا سمجھ اتنے

سنو

ہم

دل سے دل کی سنتے ہیں

زباں ہاتھوں کی سمجھتے ہیں

یہ جو

ہمیں تم سے ، تمہیں ہم سے

زرادوری پر رکھتی ہے

زرا مشکل سی لگتی ہے

کہ

کبھی کوئی بات کہنی ہو

کبھی کوئی بات سننی ہو

سنو

ہم سب سمجھتے ہیں

ہم سب ہی سنتے ہیں

زرا سا غور تو کرنا

ہم نظروں کو پڑھتے ہیں

ہم نظروں کو سنتے ہیں

 

ورلڈ ہیرنگ ڈے

kh hum ankhoon sy sunty hein     uawrites.com

1 thought on “Kh Hum Nazroon Sy Sunty Hein

  • Thank you for any other great post. Where else may just anyone get that
    kind of information in such a perfect method of writing?
    I’ve a presentation subsequent week, and I’m on the search for such info.

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *